بوٹا ایس دا جھک کے ہور جھُمے چڑھے لہر، ہنیریاں جھُلنے توں

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 73
کدوں پئی رسوائی نہ گل ایہدے کدوں شوق ڈریا پیریں رُلنے توں
بوٹا ایس دا جھک کے ہور جھُمے چڑھے لہر، ہنیریاں جھُلنے توں
ہیراں منجیاں، ملیاں تھلیں رُلیاں کئی سسیاں کہندیاں پنوں پنوں
دسّو ہون والی کوئی گل، کدوں بُھلے یار بھُلاؤنے بھُلنے توں
سدا بال پنگھوڑیاں جھلُ جھُل کے چڑھدے آئے پروان، اج کیہ کہئیے
بوٹے لِپھ لِپھ ہوئے بے جان سبھے کس قہر دی واؤ دے، گھلنے توں
ہتھیں کڈھے چشمے نئیں بند ہوندے ایہہ تے دل دریا ہے، لہر چڑھیا
لکھ جھوٹ تسلی دے، بن بنھیئے کدوں رہن انج اتھرو ڈُلھنے توں
اسیں ماجداُ مست فقیر سادھو کدوں جاندے ساں انج وی ہو ویسی
ہر نظر اساڈی رقیب ہوسی اس یار دے بھیت دے کُھلنے توں
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s