ایہو نشانی یاراں دِتی، ایہو ہتھاں دے چھلّے

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 47
دُکھ گنیندے اُنگلاں اُتّے، بہہ کے کل مکّلے
ایہو نشانی یاراں دِتی، ایہو ہتھاں دے چھلّے
اگوں پرت کے تسی نہ پچھو، تے کی دوش اساڈا
کدوں سنیہڑے اساں تہانوں، سدھراں نال نہ گھلّے
دنیا دے دکھ وی نئیں بُھلدے، پر ہائے دکھ تیرے
اسیں ہزاراں منہ دیاں رکھئیے، اوہ ولّے ایہہ ولّے
عشق دا ناں نئیں لین سکھالا، تن من ایس چ گلدے
دَبھ جم جاندی، فیر فی عاشق، جنگلیں رہندے کھلّے
کون اساڈا من پرچائے، ماجدُ کنھوں بھائیے
نہ ائی اسیں سیانے تِھیندے، نہ ایہہ لوکی جھلّے
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s