اوہ کُجھ خوف نیں دل وچ، اچّا بول نہ بولن دین

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 61
سُتے لیکھ اساڈے، سانوں اکھ نہ کھولن دین
اوہ کُجھ خوف نیں دل وچ، اچّا بول نہ بولن دین
انگلاں رکھ رکھ جان پڑھاندے، سانوں پیار کتھا
اوڑک دا ورقہ پرخورے، کیوں نہ پھولن دین
سپ دی چال وی کی شے اے، واہ لبھی چال اُنہاں
ہتھ وچ بھریا، دُدھ کٹورا وی، نہ ڈولن دین
دُکھ درداں نے اَنھ مچا کے، وَیر کمایا کی
دل دے ویہڑے اندر، تیری یاد تے ٹولن دین
اُنج ائی منگن، ایس مکھ دے، نقشے دا نواں اُگھاڑ
ہنجواں اندر، دل دا گوہڑا رنگ تے، گھولن دین
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s